Bayan Ho Kis Zuban Se Martaba Siddiq E Akbar Ka Manqabat Lyrics

Bayan Ho Kis Zuban Se Martaba Siddiq E Akbar Ka Manqabat Lyrics

Bayan Ho Kis Zuban Se Martaba Siddiq E Akbar Ka Lyrics

Bayaan Ho Kis Zubaan Se Martaba Siddique-E-Akbar Ka
He Yaare Ghaar Mehboobe Khuda Siddique-E-Akbar Ka

Ilaahi Rahem Farma Khaadim E Siddique-E-Akbar Hoon
Teri Rehmat Ke Sadqe Waasta Siddique-E-Akbar Ka

Rasul Aur Ambiya Ke Baad Jo Afzal Ho Aalam Se
Ye Aalam Mein Hai Kis Ka Martaba Siddique-E-Akbar Ka

Gadaa Siddique-E- Akbar Ka Khuda Se Fazl Paata Hai
Khuda Ke Fazl Se Mein Hoon Gadaa Siddique-E-Akbar Ka

Huwe Farooq O Usman O Ali, Jab Daakhile Bayt
Bana Fakhro Salaasil Silsila Siddique-E-Akbar Ka

Maqaame Khwaabe Raahat Chain Se Aaraam Kar Ne Ko
Bana Pehlu E Mehboob E Khuda Siddique-E-Akbar Ka

Ali haiin us ke dushman aur woh dushman Ali ka
Jo dushman aql ka dushman huwa Siddique-e- Akbar ka

Lutaaya raahe haq mein ghar kaee baar is muhabbat se
Ke lut, lut, kar HASAN ghar bhar gaya, Siddique-e- Akbar ka

Bayan Ho Kis Zuban Se Martaba Siddiq E Akbar Ka Lyrics
Bayan Ho Kis Zuban Se Martaba Siddiq E Akbar Ka Lyrics
Naat with lyrics

बयाँ हो किस ज़बाँ से मर्तबा सिद्दीक़-ए-अकबर का

बयाँ हो किस ज़बाँ से मर्तबा सिद्दीक़-ए-अकबर का
है यार-ए-ग़ार महबूब-ए-ख़ुदा सिद्दीक़-ए-अकबर का

इलाही ! रहम फ़रमा ख़ादिम-ए-सिद्दीक़-ए-अकबर हूँ
तेरी रहमत के सदक़े, वास्ता सिद्दीक़-ए-अकबर का

रुसुल और अंबिया के बा’द जो अफ़ज़ल हो ‘आलम से
ये ‘आलम में है किस का मर्तबा ? सिद्दीक़-ए-अकबर का

गदा सिद्दीक़-ए-अकबर का ख़ुदा से फ़ज़्ल पाता है
ख़ुदा के फ़ज़्ल से मैं हूँ गदा सिद्दीक़-ए-अकबर का

हुए फ़ारूक़-ओ-‘उस्मान-ओ-‘अली जब दाख़िल-ए-बै’अत
बना फ़ख़्र-ए-सलासिल सिलसिला सिद्दीक़-ए-अकबर का

नबी का और ख़ुदा का मद्ह-गो सिद्दीक़-ए-अकबर है
नबी सिद्दीक़-ए-अकबर का, ख़ुदा सिद्दीक़-ए-अकबर का

‘अली हैं उस के दुश्मन और वो दुश्मन ‘अली का है
जो दुश्मन ‘अक़्ल का, दुश्मन हुआ सिद्दीक़-ए-अकबर का

लुटाया राह-ए-हक़ में घर कई बार इस मोहब्बत से
कि लुट लुट कर, हसन ! घर बन गया सिद्दीक़-ए-अकबर का

शायर:
मौलाना हसन रज़ा ख़ान

ना’त-ख़्वाँ:
ओवैस रज़ा क़ादरी

Bayan Ho Kis Zuban Se Martaba Siddiq E Akbar Ka – Lyrics

بیاں ہو کس زباں سے مرتبہ صدیق اکبر کا
ہے یارِ غار محبوبِ خدا صدیق اکبر کا

الٰہی رحم فرما خادمِ صدیق اکبر ہوں
تری رحمت کے صدقے واسطہ صدیق اکبر کا

رُسل اور انبیا کے بعد جو افضل ہو عالم سے
یہ عالم میں ہے کس کا مرتبہ صدیق اکبر کا

گدا صدیق اکبر کا خدا سے فضل پاتا ہے
خدا کے فضل سے میں ہوں گدا صدیق اکبر کا

ہوئے فاروق و عثمان و علی جب داخلِ بیعت
بنا فخر سلاسِل سلسلہ صدیق اکبر کا

مقامِ خوابِ راحت چین سے آرام کرنے کو
بنا پہلوے محبوبِ خدا صدیق اکبر کا

علی ہیں اُس کے دشمن اور وہ دشمن علی کا ہے
جو دشمن عقل کا دشمن ہوا صدیق اکبر کا

لٹایا راہِ حق میں گھر کئی بار اس محبت سے
کہ لُٹ لُٹ کر حسنؔ گھر بن گیا صدیق اکبر کا

HAI KHATM E NABUVVAT KE LIYE JAAN BHI HAJIR NAAT LYRICS

Nabi Ki Jaan Abubakar Lyrics

hamare aaqa hamare maula imam e azam abu hanifa lyrics

Hazrat Abu Bakr Urdu PDF Book

Seerat Hazrat Syedna Abu Bakr Siddique Pdf

Fazilat e Syedna Abu Bakar Ka Munkir Ahle- Sunnat se Kharij Hai pdf book

منقبت خلیفۂ اوّل سیدنا ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ
*داستانِ عشق*

*ادب اُنکی عبادت ہے ، ادب ہی انکا ایماں ہے*

مرے آقا کا جو در ہے ،، وہ در صدیق اکبر کا
بسا ہے سبز گنبد میں ، نگر صدیق اکبر کا

نچھاور خلد بھی اُسپر ، جہاں لیٹے ہوے ہیں وہ
نبی کے قرب کی جنت ہے گھر صدیق اکبر کا

اترتا ہے ابھی تک” اِذھُما فی الغَارْ” کا صدقہ
وہی پہلو ہے اب بھی مُستَقَر صدیق اکبر کا

اَنیسِ مصطفائی بن گئ ، ہر اک ادا اُن کی
نرالا ہے زمانے سے ،، ہنر صدیق اکبر کا

زمانہ کیسے بھولےگا وہ” غارِثور” کا منظر
شبِ ہجرت انوکھا تھا سفر صدیق اکبر کا

ادب انکی عبادت ہے، ادب ھی انکا ایماں ھے
تعارف ہے یہی بس مختصر صدیق اکبر کا

نبی کو دیکھنا سب سے پسندیدہ عمل ان کا
ہے کتنا بے بہا ، نورِ بَصَر صدیق اکبر کا

فدا انسانیت کی عظمتیں انکے تقدس پر
لقب، بعدِ رُسُل ، افضلْ بَشَر صدیق اکبر کا

اُنھیں حضرت علیِّ پاک ، بیحد پیار کرتے تھے
ادب کرتے تھے ، عثمان و عمر صدیق اکبر کا

اِسی جذبے سے چاہت بن گئ سب سے غنی اُن کی
نبی کا عشق ہے ، انمول زر صدیق اکبر کا

بنی شمعِ نبوت کیلئے فانوس ،، ان کی جاں
حِصارِ مصطفٰی ، تارِ جگر صدیق اکبر کا

شَرَف  پہلی خلافت کا، اُنھیں سرکار نے بخشا
ہے بُرجِ افضلیّت پر ، قمر صدیق اکبر کا

کریں گے سب اجالےحشر تک، کَسْبِ ضیا اُن سے
سدا چمکے گا خورشیدِ نظر صدیق اکبر کا

نبی کے بحرِ الفت سے ہوئ ہے اس کی سیرابی
نہ سوکھے گا کبھی باغِ جگر صدیق اکبر کا

سجے ہیں شخصیت میں آیتِ قرآں کے گلدستے
ہراک رنگِ فضیلت ہے اَمَر صدیق اکبر کا

ہمارے واسطے اعزاز ہے ان کی ثنا خوانی
قصیدہ ھے بہت ہی معتبر صدیق اکبر کا

وہاں سے اُس کے، سارے کام پورے ہوتے رہتے ہیں
نہیں پھرتا ہے خادم دربدر، صدیق اکبر کا

یقینا وہ ، درِ سرکار کا محبوب ھوتا ہے
جو بَن جاتا ہے محبوبِ نظر صدیق اکبر کا

محبت کے نئے جلوے مرتب کر دیئے جس نے
عجب انداز سے چمکا گُہر صدیق اکبر کا

بُجھا رہتا ہے سورج ، ان کے تلووں کی تجلی سے
کوئ جانے گا کیا ؟ اعجازِ ” سَـر” صدیق اکبر کا

وفا کی کہکشاں ہر اک قدم پر جگمگاتی ہے
نہ کم ہوگا جمالِ رہ گزر صدیق اکبر کا

جہانِ عشق میں ہے آج بھی ان کی شہنشاہی
کہ ہے کردار ایسا تاجور ، صدیق اکبر کا

غلامانِ نبی، دائم رہیں گے فیضیاب اُس سے
سدا پھلدار ہے فکری شجر صدیق اکبر کا

ہوئے عشق نبی کے ، آجتک جتنے دیئے روشن
فریدی ! سب میں آیا ہے اثر صدیق اکبر کا

Leave a Reply