Fida Kr Ishq-E-Nabi Par Jaan Naat Lyrics | फिदा कर इश्क़-ए-नबी पर जान

Fida Kr Ishq-E-Nabi Par Jaan Naat Lyrics

 

Fida Kr Ishq-E-Nabi Par Jaan
Muqammal Karle Tu Iman Zamana Yaad Karega

Jab Yaad Nabi Ki Aati Hai Ik Kaif Sa Aalam Hota Hai
Jab Zikre Nabi Chhid Jata Hai Ik Wajd Ka Mosam Hota Hai
Yahi To Kahta Hai Qur’an K Aaqa Hai Jaan-E-Iman
Zamana Yaad Karega Zamana Yaad Karega

Sarkar Se Tu Hai Door Magar Sarkar To Tujh Se Door Nahi
Kyu Khoya Khoya Rehta Hai Mukhtar Hai Tu Majboor Nahi
Nabi Ko Pahle Dil Se Maan, Nabi Par Sab Kuch Kar Qurbaan
Zamana Yaad Karega Zamana Yaad Karega

Aslaf Ki Hai Taarikh Yahi Sahil Pe Jala Di Hai Kashtee
Daudaye Hain Ghode Dariya Par Kya Ishq-E-Nabi Ki Masti Thi
Tumhi Ho Wo Mard-E-Maidan Zara Dhundo Apni Pahchan
Zamana Yaad Karega Zamana Yaad Karega

Sarkar Ke Jalwo Se Raushan Iman-O-Amal Ki Duniya Hai
Sarkar Ke Deewano Ki Sada Taqleed Zamana Krta Hai
Nabi Ka Dekh Zara Faizaan Ki Taza Ho Jaye Iman
Zamana Yaad Karega Zamana Yaad Karega

Darbare Wilayat Kya Kehna Jab Unka Ishara Milta Hai
Baarah Barso Ki Doobi Kashti Ko Ik Pal Me Kinara Milta Hai
Asad Ye Ghaus Ka Hai Faizan Hai Jis Se Fikr-O-Nazar Hairan
Zamana Yaad Karega Zamana Yaad Karega

Jo Baat Thi Aa’la Hazrat Ki Wo Aaj Kisi Molwi Me Nahi
Wo Ishq-E-Nabi Ke Paikar The, Tharrate The Unse Dushman Bhi
Diya Humko Kanzul Iman Ye Hai Hum Par Unka Ehsaan
Zamana Yaad Karega Zamana Yaad Karega

 

 

फिदा कर इश्क़-ए-नबी पर जान

 

फिदा कर इश्क़-ए-नबी पर जान
मुकम्मल करले तू ईमान, ज़माना याद करेगा।

जब याद-ए-नबी की आती है, एक कैफ़ सा आलम होता है,
जब ज़िक्र-ए-नबी छिड़ जाता है, एक वजद का मौसम होता है।
यही तो कहता है क़ुरआन का, आका है जान-ए-ईमान,
ज़माना याद करेगा, ज़माना याद करेगा।

सरकार से तू है दूर मगर, सरकार तो तुझसे दूर नहीं,
क्यों खोया खोया रहता है, मुख्तार है तू मजबूर नहीं।
नबी को पहले दिल से मान, नबी पर सब कुछ कर क़ुरबान,
ज़माना याद करेगा, ज़माना याद करेगा।

अस्लाफ़ की है तारीख यही, साहिल पे जला दी है कश्ती,
दौड़ाए हैं घोड़े दरिया पर, क्या इश्क़-ए-नबी की मस्ती थी।
तुम्हीं हो वह मर्द-ए-मैदान, ज़रा ढूंढ़ो अपनी पहचान,
ज़माना याद करेगा, ज़माना याद करेगा।

सरकार के जल्वों से रौशन, ईमान-ओ-आमल की दुनिया है,
सरकार के दीवानों की सदा, तकलीद ज़माना करता है।
नबी का देख ज़रा फ़ैज़ान, कि ताज़ा हो जाए ईमान,
ज़माना याद करेगा, ज़माना याद करेगा।

दरबार-ए-विलायत क्या कहना, जब उनका इशारा मिलता है,
बारह बरसों की डूबी कश्ती को, एक पल में किनारा मिलता है।
असद ये गौस का है फ़ैज़ान, है जिस से फ़िक्र-ओ-नज़र हैरान,
ज़माना याद करेगा, ज़माना याद करेगा।

जो बात थी आला हज़रत की, वो आज किसी मौलवी में नही

ं,
वो इश्क़-ए-नबी के पैकर थे, थर्रते थे उनसे दुश्मन भी।
दिया हमको क़ुरआन का, ये है हम पर उनका एहसान,
ज़माना याद करेगा, ज़माना याद करेगा।

 

 

 

 

 

 

 

فدا کر عشقِ نبی پر جان

 

فدا کر عشقِ نبی پر جان
مکمل کر لے تو ایمان ، زمانہ یاد کریگا۔

جب یادِ نبی کی آتی ہے، ایک کیف سا عالم ہوتا ہے،
جب ذکرِ نبی چھڈھ جاتا ہے، ایک وجد کا موسم ہوتا ہے۔
یہی تو کہتا ہے قرآن کا، آقا ہے جانِ ایمان،
زمانہ یاد کریگا، زمانہ یاد کریگا۔

سرکار سے تو ہے دور مگر، سرکار تو تجھ سے دور نہیں،
کیوں خویا خویا رہتا ہے، مختار ہے تو مجبور نہیں۔
نبی کو پہلے دل سے مان، نبی پر سب کچھ کر قربان،
زمانہ یاد کریگا، زمانہ یاد کریگا۔

اسلاف کی ہے تاریخ یہی، ساحل پہ جلا دی ہے کشتی،
دوڑائے ہیں گھوڑے دریا پر، کیا عشقِ نبی کی مستی تھی۔
تمہیں ہو وہ مردِ میدان، ذرا ڈھونڈو اپنی پہچان،
زمانہ یاد کریگا، زمانہ یاد کریگا۔

سرکار کے جلووں سے روشن، ایمان و عمل کی دنیا ہے،
سرکار کے دیوانوں کی صدا، تقلید زمانہ کرتا ہے۔
نبی کا دیکھ ذرا فیضان، کہ تازہ ہو جائے ایمان،
زمانہ یاد کریگا، زمانہ یاد کریگا۔

دربارِ ولایت کیا کہنا، جب انکا اشارہ ملتا ہے،
بارہ برسوں کی ڈوبی کشتی کو، ایک پل میں کنارہ ملتا ہے۔
اسد یہ گوس کا ہے فیضان، ہے جس سے فکر و نظر حیران،
زمانہ یاد کریگا، زمانہ یاد کریگا۔

جو بات تھی آلہ حضرت کی، وو آج کسی مولوی میں نہیں،
وو عشقِ نبی کے پیکر تھے، تھرّتے تھے ان سے دشمن بھی۔
دیا ہمکو قرآن کا، یہ ہے ہم پر انکا احسان،
زمانہ یاد کریگا، زمانہ یاد کریگا۔
“`

 

[مشاعرہ رپورٹ]
السلام علیکم
حضرات گزشتہ مشاعروں کی طرح پچھلے دنوں بھی آپ سب کے محبوب عالمی واٹسپ گروپ “بزم نعت” کا ستہترواں شاندار طرحی مشاعرہ منعقد ہوا.
جس کا مصرع طرح سرکار تاج الشریعہ علیہ الرحمہ کے کلام سے اخذ کیا گیا تھا
(نوٹ۔ 2019 کو بزم نعت میں سالِ تاج الشریعہ کے نام سے منایا جا رہا ہے اس لیے پورے سال حضرت کے ہی مصرعوں پر مشاعرے منعقد ہوں گے )
اس بار کا مصرع تھا.
“ترس کھاؤ ! مِری تشنہ لبی پر”
اس مصرع کے تحت دنیا بھر سے کافی شاعروں نے اپنے اپنے کلام پیش کئے.
اور 31 لوگوں نے وقت مقررہ پر اپنا کلام مقابلے میں شرکت کے لئے بھیجا۔
یہاں وہ سارے کلام مکمل پیش ہیں ملاحظہ ہوں.
_نعت رسول مقبول ﷺ_
مری ہر سانس قرباں ہے نبی پر
مجھے ہے ناز اپنی زندگی پر
کرم ان کا گلوں کی تازگی پر
انہی کا فیض ہے ہر اک کلی پر
شہنشاہی نچھاور ہو رہی ہے
در پاک نبی کی نوکری پر
قدم چومے ہیں اس نے مصطفے کے
لٹا دو جان طیبہ کی گلی پر
صبا! تو روز جاتی ہے مدینے
یہ دل قرباں تری خوش قسمتی پر
ہمیشہ رنج و غم میں کام آئے
یہ حق ہے آدمی کا آدمی پر
محل فرودس کے نازاں ہیں احمد
گدائے مصطفے کی جھونپڑی پر
*علی احمد رضوی بلرام پوری*
***********************************
خدا کو پیار آتا ہے اسی پر
ہو جس کا دل فدا پیارے نبی پر
عنایت پر عنایت اللہ اللہ
میں صدقے آپ کی دریا دلی پر
دو عالم چاہتے ہیں رب کی مرضی
خدا راضی ہے آقا کی خوشی پر
جسے مل جاۓ بھیک اس پاک در کی
نظر کیوں رکھے تاج سروری پر؟
ہلال عید ہے چہرہ نبی کا
فدا ہے چاند جس کی چاندنی پر
جو لوٹا ان کے در سے اس سے پوچھو
گزرتی کیا ہے دل پر واپسی پر
کرے گستاخیاں جو ان کی راحت!
سدا لعنت ہو ایسے لعنتی پر
از راحت انجم (ممبئی)
***********************************
فصاحت ناز کرتی ہے نبی پر
بلاغت خوش ہے انکی نوکری پر
ہزاروں بندگی قربان میری
رسول پاک کی اک بندگی پر
کیا قرآن کو نازل خدا نے
مکمل مصطفی کی ہے زندگی
وہی ہے مؤمن کامل یقیناً
نچھاور جان جو کردے نبی پر
کیا ایمان سے خود کو مشرف
چچاحمزہ نےانکی اک خوشی پر
اسی کے منتظر ہے نار دوزخ
جسے انکار ہے غیب نبی پر
درود پاک پڑھتی ہے نظامی
سمندر کی ہر اک مچھلی نبی پر
حشمت رضا نظامی .مجولیاوی . سیتامڑھی بہار
***********************************
غریبوں کو ہے ناز ایسے سخی پر
نہیں جس کی نظر بیشی،کمی پر
کوئی ثانی نہیں اس کا جہاں میں
میں ہوں قربان لاثانی نبی پر
بلا لیجے کسی صورت مدینے
امیری ہنس رہی ہے مفلسی پر
عطا کر دو مجھے تلووں کا بوسہ
*ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر*
اٹھے صدیق ہی تصدیق کرنے
اٹھا جب حرف معراج النبی پر
ہوئیں قربان حوران بہشتی
چمن زار مدینہ کی کلی پر
شفاعت کی اٹھی جب بات *شیدا*
نظر جاکر ٹکی سرکار ہی پر
محمد حمزہ *شیدا* قادری اسمٰعیلی
رضوی بنارس
***********************************
میں اتراؤں گا اپنی زندگی پر
نبی رکھ لیں مجھےجو نوکری پر
نگاہیں منتظر ہیں کب سے آقا
*ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر*
سر محشر ٹکی ہونگیں نگاہیں
شہہ دیں آپ کی جلوہ گری پر
بلائیں گے مجھے کب در پہ آقا
بہت روتا ہوں اپنی بے بسی پر
لکھاتے ہیں وہ خود ہی اپنی نعتیں
کریں کیوں ناز ہم سب شاعری پر
جو دیکھ آئے در خیرالبشر کو
نہ ہو کیوں ناز ان کو زندگی پر
چلو غفران اب کوئے نبی میں
کرم سرکار کرتے ہیں سبھی پر
✍ *محمد غفران قادری*
*سعداللہ نگر بلرام پور*
***********************************
نہ فکر و فن نہ اپنی شاعـــری پر
فقط نازاں ہوں میں مدح نبی پر
نہ تقویٰ پر نہ اپنی بنــــــدگی پر
ہے تکیہ یا نبی بس آپ ہی پـــــر
لب کوثر کھڑے سب یہ کہیں گے
“ترس کھاؤ مـــری تشنہ لبی پـــر “
غــــلامی سرور عــــــالم کــی یارو
ہے افضل اس جہاں کی خسروی پر
وہی حقــــــدار ہے جنت کا بیشک
نچھاور جان جو کـــر دے نبی پر
کـــــرے توہین جو پیارے نبی کی
جہنم ہے ســزا اس سرکشی پـــر
کھلیں محشر میں جب اعمال نامے
کـــــــرم کـــــرنا ریاض قادری پر
محمد ریاض حسین خان قادری تیغی شمسی
دارالعلوم تیغیہ شمس العلوم
رکسہا شریف، غازی پور، یوپی
***********************************
مجھے ہے ناز اس خوش قسمتی پر
فدا ہوں میں رسول ہاشمی پر
بہار باغ جنت بھی فدا ہے
دیار مصطفٰے کی دلکشی پر
کرم فرمائیے شاہ دوعالم
ہمارے قلب کی افسردگی پر
حبیب کبریا خیر الوری کے
ہیں احسانات سب کی زندگی پر
سراپا مصطفٰی ہیں نور و رحمت
کرم ان کا ہے یکساں، ہم سبھی پر
بھروسہ ہے بہت ہم عاصیوں کو
شہ کون و مکاں کی بندگی پر
تمہارا دیکھ لے دربار آقا
کرم ہو ایسا شارق خالدی پر
سید شارق رضا خالدی شاہجہاں پوری
***********************************
گدا نیکی پہ ہے یا ہے بدی پر
عیاں سب ہے رسول ہاشمی پر
تخیل لا مکاں کی سیر پر ہے
نظر ہے شرح سبحن الذی پر
میاں اس امر کو صدیاں بھی کم ہیں
چھڑے جو بحث اوصاف نبی پر
نبی نے کر دیا اعلان حق کا
بپاہے حشر رسم آزری پر
مہ و خورشید و انجم سب نچھاور
نبی کے حسن کی تابندگی پر
کرم اے مالک تسنیم و کوثر
ترس کھاٶ مری تشنہ لبی پر
محمد ہیں ہراک خوبی کے جامع
موقف نبیوں کا بھی ہے اسی پر
حافظ اشرفی
***********************************
فـدا جـو ہـوگـیا پـیـارے نـبـی پـر
ہـوا فـیـضــان ہــر اس امـتـی پـر
مـری معـراج کـو کافـی یـہـی ہـے
تو رکھ لے اپنـے در کـی نوکری پر
عطا ہوجائے کچھ تلؤں کا دھون
میں پھر اتراؤں اپنی عاشقی پر
نـبـی کـے گنــبـدِ خـضرا کـے آگـے
قمـر بـھـی ہیچ اس روشـنـی پـر
عـطــا کـردو مـجـھـے جام مـحـبـت
تـرس کـھـاؤ مـری تـشـنـہ لـبـی پـر
پتہ جب موت کا کچھ بھی نہیں ہے
تـکـبـر کـرتـے ہـو کـیـوں زنـدگـی پـر
مـقـدر کـے سـکـنـدر ہـیـں وہ عاشق
فدا جـو ہـوگـئـے ہـیـں ازہــــری پـر
نواب ازہر منظری مسواسی رامپور
***********************************
نہ دولت پرنہ زر ناسروری پر
ہمیں تو ناز ہے اپنے نبی پر
لئے شوق زیارت دل میں آقا
بہت روتاہوں اپنی بےبسی پر
نبی سے سدرہ پرجبریل بولے
تجلّی سےجلیں گےبڑھتےہی،پر
تمھارےقبضےمیں ہےجام کوثر
*”ترس کھاؤمری تشنہ لبی پر”*
مہ وانجم درخشاں ہیں انہیں سے
حکومت ان کی ہے ہر روشنی پر
تخیل میں ہوجس کے یادطیبہ
میں قرباں ایسی فکروآگہی پر
نظر *محفوظ* کی رہتی ہےہردم
در محبوب رب کی حاضری پر
*محفوظ عالم جامعی* بلرامپوری
***********************************
فدا یہ دل نہیں ہے ہر کسی پر
فقط قربان ہے اپنے نبی پر
شرَف بخشا ہے ان کورب نے ایسا
سبھی کو ناز ہے میرے نبی پر
مرے آقا پلادو جام کوثر
“ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر”
مدینے کی گلی میں کیا چمک ہے
مہ و خور کی نظر ہے اس گلی پر
مجھے آقا بلالو شہر طیبہ
مصر ہے دل وہاں کی حاضری پر
خبر ہیں ان کو ہر اک امتی کی
نبی کا یہ کرم ہے امتی پر
دکھا دو نور کو آقا مدینہ
بہت روتا ہے اپنی مفلسی پر
🖋…. محمد مدبر عالم نور جامعی
اتردیناجپوری
***********************************
نہ دولت پر نہ ہرگز بندگی پر
مرا تکیہ ہے آقا آپ ہی پر
الہی بخش دے مجھ کو سعادت
گزاروں زندگی مدح نبی پر
یہ حسرت دل میں کب سے پل رہی ہے
مرے سرکار رکھ لیں نوکری پر
جہنم میں بهلا کیسے وہ جائے ؟
فدا ہے جو بهی اصحاب نبی پر
تمہارے میکدے تک آگیا ہوں
“ترس کهاؤ مری تشنہ لبی پر”
بروز حشر ہوگا سایہ افگن
لواءالحمد ہر اک امتی پر
بلا کر یا نبی شہرِ مدینہ
کرم فرمایئے “عامر علی”پر
عامر برکاتی شاہجہانپوری
************************************
*بھروسہ کیوں کریں ہم ہر کسی پر*
*بھروسہ کر لیا ہے جب نبی پر*
*پلا دو جامِ کوثر اب مجھے بھی*
*ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر*
*اسے کیسے جلائے گی جہنم*
*فدا جو ہو گیا پیارے نبی پر*
*جو عشقِ مصطفی میں جان دیدے*
*لٹا دوں جان میں اس آدمی پر*
*وہ پائے گا بروزِ حشر جنت*
*جو شیدا ہو گیا آلِ نبی پر*
*بروز حشر مجھ کو بخشوانا*
*کرم فرمانا میری بے بسی پر*
*”منیرِ” قادری کی جب ہو رحلت*
*نظر اس کی ہو بس روئے نبی پر*
*منیر شاہجہانپوری*
*************************************
*مــرے ســرکار مـیری بــے بــسی پــر*
*کـــرم فــرمـائیں آقــا مفــلـسی پــر*
*تـمہـارے مئـے کـدے کا مـیں ہـوں طـالـب*
*تــرس کـھاؤ مـری تـشـنہ لـبـی پــر*
*چلـے جـس رہ پـہ ہیـں اصـحـاب ان کے*
*قــدم ثـابـت رہـے مـولـیٰ اسـی پـر*
*یـہی فـرمـان ہـے رب الـعلـیٰ کا*
*ہے لازم مـدح آقـا ہـر کـسی پـر*
*نـہیـں حــسـن عـمـل کـچھ پـاس مـیـرے*
*بـھـروسـا ہـے اگـر تـو بـس نـبی پـر*
*فنا ہو جائے جو عشق نبی میں*
*نـچھـاور جــان ایــسی زنــدگـی پـر*
*یقیں ہے جائے گا ریحان تو بھی*
*درِ خـیـرالبــشـر کــی حــاضـری پــر*
*از قـــــــــــــــــــــــــــلم*
*ریـحـان رضـــا مــرکـــزی*
*ٹـســوا بــــریــلــی شـــریــف*
***********************************
نہ ٹالیں دید، آقا ،، پھر کبھی،، پر
بھروسا کس کو ہے اس زندگی پر
شہنشاہ دو عالم ، خاک ، مسند
فدا ہر کرّ و فر اس سادگی پر
وہ امی جس پہ ہر تعلیم نازاں
ہے فائز ہر مقام آگہی پر
مودب ہے نظارہ حسن کل کا
فدا کونین اس شائستگی پر
نسیم صبح ، بادل، اور سمندر
ہیں نازاں آپ کی دریا دلی پر
اے یار بیکساں بر من نگاہے
زمانہ ہنس رہا ہے بیکسی پر
کفیل اپنی خبر سے بے خبر ہو
مقام تف ہے ایسی آ گہی پر
کفیل فتحپوری
مدرسہ شمس العلوم سنگاٶں
فتحپور یو۔۔پی
***********************************
فدا میں آپ کی دریا دلی پر
ترس کھاٶ مری تشنہ لبی پر
نبی کی یاد گر شامل نہیں ہے
تو تکیہ خا ک ایسی بندگی پر
طو اف کو ئے جا نا کر رہا ہوں
سلا می بھیجئے اس بندگی پر
فقیروں اور غریبوں کے مسیحا
کرم فر مائیں میری بے بسی پر
ہے جس ماہِ عرب سےجگ اجالا
بھروسا ہےاسی کی چاندنی پر
بشر جن وملا ئک سب فداھیں
مر ے آ قا کے درکی نوکر ی پر
چل ہٹ اےنجدیا منھ دیکھ اپنا
اڑ اہے تو نبی سے ہمسری پر
افلاک مصباحی ملت نگر
***********************************
میں صدقے جان و دل سے اس نبی پر
خدا راضی ہو جس کی پیروی پر
مٹادو قلب کی اب میرے حسرت
ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر
نبی مبعوث اب کوئی نہ ہوگا
نبوت ختم ہے بس آپ ہی پر
نبی کے پاک در کی نوکری کو
ہے حاصل فوقیت شاہنشہی پر
یہی ہے آخرت کی میری پونجی
میں نازاں ہوں نبی سے عاشقی پر
کسی لائق مجھے بھی کردو آقا
بہت مایوس ہوں میں بے بسی پر
منا لے افتخار آقا کو اپنے
خدا خوش ہے نبی ہی کی خوشی پر
✍ *افتخار فیضی بلرامپوری*
***********************************
جہاں میں آمدِ نورِ نبی پر
ہوئی مجبور ظلمت خودکشی پر
حقیقت ہے عیاں یہ ہر کسی پر
جناں قرباں ہے طیبہ کی گلی پر
پریشانی پریشاں ہو رہی ہے
درودِ پاک سن سن کر نبی پر
فقط شمس و قمر پر ہی نہیں ہے
مرے آقا کا احساں ہے سبھی پر
مدینے کی خوشی اللہ اکبر
سبھی خوشیاں نچھاور اس خوشی پر
ہوئی مدحت بھی شاہِ بحروبر کی
چلا خنجر بھی اعدائے نبی پر
شفیق آئی قیامت میں بالآخر
نبی کی نعت غالب بندگی پر
*شفیق رائے پوری*
***********************************
*فرشتے معترض تھے آدمی پر*
*نظر پہنچی نہ تھی جب تک نبی پر*
*لب ِ کوثر ، وہ صدقہ مانگتے ہیں*
*جو خندہ زن تھے میری تشنگی پر*
*سر ِ میزاں نہیں ہے کوئی اپنا*
*مرا ، تکیہ ہے ، آقا آپ ہی پر*
*عجب کیا ہے اجابت بولے آمین*
*صداۓ ” رب ھبلی امّتی ” پر*
*طواف ِ کوۓ جاناں جو کرادے*
*خودی قربان ایسی بیخودی پر*
*مسلسل چومتی ہے ان کی گلیاں*
*فدا ہے چاند خود ہی چاندنی پر*
*لگا کر لب سے دو جاوید کو جام*
” *ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر* “
جاوید صدیقی گونڈوی
***********************************
*طبیعت آگئی نعتِ نبی پر*
*خودی قربان ہے دیوانگی پر*
*مزیّن ہو گئیں جنّت کی راہیں*
*کہے تھے شعر طیبہ کی گلی پر*
*وہ تجویزِ نبی، ﷲ اکبر*
*نظر ڈالو ” نزاعِ اسودی” پر*
*تو پھر سائے کا امکاں ہی کہاں ہے*
*پڑے جب روشنی ہی روشنی پر*
*اِدھر مانگا اُدھر کاسہ میں ڈالا*
*نہ ٹالا سیّدی نے “پھر کبھی” پر*
*ملے حسان بن ثابت کا صدقہ*
*ادب چھا جائے میری شاعری پر*
*ایازِ قادری ، شاہِ دو عالم*
*حلیمہ سعدیہ کی اونٹنی پر*
از نتیجہ فکر *ہارون ایاز* برہان پور
***********************************
*فدا جتنا زمانہ ہے نبی پر*
*نہیں شیدا کوٸی اتنا کسی پر*
*پلادو مجھ کو آقا جام عرفاں*
*”ترس کھاٶ مری تشنہ لبی پر“*
*فدا ہیں جنتیں آٹھوں فدا ہیں*
*مرے آقا تمہاری سادگی پر*
*ہے استقبال عشاق نبی کا*
*لکھا ہے خلد کی بارہ دری پر*
*مجھے سرکار بس دیوانہ کہدیں*
*لگادیں مہر میری بے خودی پر*
*چڑھی ہے ماٹ کی ان کی ہی رنگت*
*مشیت کی ہر اک کارہ گری پر*
*دیے ہیں نعت کے آقا نے تمغے*
*ہے لطف خاص عارف قادری پر*
*از قلم : عارف القادری عارف امروہوی*
***********************************
فدا ہوتی نہیں ہے جو نبی پر
ہے لعنت رب کی ایسی زندگی پر
نچھاور ہو رہے ہیں چاند تارے
رخِ بدرالدجی کی روشنی پر
فصاحت آج تک ہے محوِ حیرت
تمہاری گفتگو کی شستگی پر
خدا کا فیصلہ محشر میں ہوگا
مرے آقا تمہاری ہی خوشی پر
نگاہیں حشر میں سبکی ٹکی ہیں
شہِ عالم کی ذاتِ عبقری پر
ہو مجھ پر بھی نگاہِ لطف ساقی
“ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر”
رہے سایہ فگن رحمت تمہاری
ریاضِ بے اماں کی زندگی پر
ریاض احمد برکاتی
***********************************
نہ اِترا چاند اپنی چاندنی پر
جما نظریں کفِ پائے نبی پر
مرا دل جگمگا تا جا رہا ہے
نظر ہے ، آپ کی جلوہ گری پر
سنا ہے قبر میں دیدار ہو گا
میں اپنی جان دے دوں اِس خوشی پر
خیالِ نعت میں رہتا ہے ہردم
میں قرباں اپنے ذوقِ شاعری پر
مؤدّب ہے ہوابھی ان کے در کی
مبارکباد ! اِس شائستگی پر
مبارک ! آپ کو فردوس رضواں!
مجھے تو ناز ہے ان کی گلی پر
کہیں رسوا نہ ہوجا ئے یہ خواہش
ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر”
*ثاقب القادری مصباحی*
ـــــــــ بنارس ـــــــــ
***********************************
نہ مال و زر نہ دنیا کی خوشی پر
مجھے ہے ناز بس عشقِ نبی پر
یقیں ہے بس تری دریا دلی پر
ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر
بہار آئی تری آمد سے آقا
ہر اک غنچے پہ اور ہر اک کلی پر
عقیدت سے جھکا تا ہوں میں دل کو
جھکاؤنگا میں سر کو حاضری پر
ستارے ماہ و انجم ، پھول گلشن
فدا ہیں سب تمہاری دلکشی پر
بہار خلد بھی کہتی ہے تک کے
ہوئی قرباں تمہاری سادگی پر
سنو جب اذھبو کی تم صدائیں
یقیں رکھو ظفر اپنے نبی پر
ظفر انور حمیدی
بینگلور
***********************************
ملی جو عیدِ میلادِ نبی پر
ہوئیں قربان خوشیاں اس خوشی پر
بلا سے ہو جہاں نازاں کسی پر
میں نازاں ہوں رسول ہاشمی پر
نہ مال وزر نہ حرصِ خسروی پر
گزارا ہے عنایاتِ نبی پر
حیات اپنی مدینے میں بسر ہو
کرم کیجے تمناے دلی پر
ثنا ان کی غذاے مردِ مومن
بقا دین متیں کی ہے اسی پر
اجل کوعید سمجھونگامیں اپنی
اگر آئیں وہ وقت جانکنی پر
وہ شان ومنزلت ہے درد ان کی
مقرر ہیں فرشتے چاکری پر
مسعود احمد مصباحی درد جالونی
***********************************
یہ کیسا غم غریبی مفلسی پر
مرے سرکار جب ہیں یاوری پر
قمر ٹکڑے کریں سورج بلائیں
بہت آسان ہے میرے نبی پر
غبار راہ مثل ماہ. . وانجم
نہ اترا چاند اپنی روشنی پر
مجھے دیدار کا شربت پلادو
ترس کھاءو مری تشنہ لبی پر
مرے آقا مرے دن کب پھرینگے
ذرا چشم عنایت مفلسی. . پر
ہے سیر لامکاں رب کا عطیہ
نظر ہوجاے سبحان الذی پر
ہوائیں تیز چلتی ہیں مخالف
کرم فاروق احمد قادری پر
فاروق مصباحی بلرامپور
***********************************
مرا جو آدمی دین نبی پر
خدا کی خاص رحمت ہے اسی پر
شہنشاہ مدینہ تیری رحمت
ہمیشہ رہتی ہے ہر آدمی پر
حکومت مصطفٰی کی ہے مکمل
زمین و آسماں خشکی تری پر
میں مرجاؤں نہ پیاسا شاہ کوثر
“ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر “
در سرکار کا کیا کہنا ابرار
ملک قربان ہوتے ہیں گلی پر
ابرار احمد سمستی پور
***********************************
مرے آقا کی تشریف آوری پر
اجالے غالب آئے تیرگی پر
حسین ابنِ علی پشتِ نبی پر
ہو جیسے اوس برگِ مخملی پر
جہاں پہرا ہو تعزیمِ نبی پر
میں ڈالوں خاک ایسی زندگی پر
نہ جھڑکیں وہ نہ جھنجھلائیں کسی پر
گدا قربان ہیں ایسے سخی پر
ملا رتبہ امام الانبیا کا
سلام آقا کی شان و برتری پر
حقیقت میں مرے آقا ہی ،کاشف
ترس کھاتے ہیں میری بے بسی پر
✍🏼از۔۔۔۔۔ڈاکٹر کاشف بریلوی
***********************************
*نہ اتراؤ جہاں کی سروری پر*
*کرم ہے مصطفیٰ کا مفلسی پر*
*شہا ! وجہِ خلائق آپ ٹھہرے*
*ٹکی ہے ساری خلقت آپ ہی پر*
*ہے گزری عمر ساری تشنگی میں !*
*ترس کھاؤ ! مِری تشنہ لبی پر*
*ہوئی تکمیلِ اُمّیدِ کلیمی !*
*شبِ معراج چَشمانِ نبی پر*
*وہ جس میں مصطفیٰ کی یاد آئی*
*مجھے ہے ناز ایسی بندگی پر*
*مرے ماں باپ اور اولاد قرباں*
*نبی پر اور اولادِ نبی پر*
*سحر ! اِحفاظِ ناموسِ رسالت !*
*مُقدَّم ہے ہماری زندگی پر*
*نسیم سحر گیاوی*
***********************************
فدا ہے ہر چمن میرے نبی پر
ملے گا نام ہر غنچہ کلی پر
میں جاکر دیکھ آؤں سوئےطیبہ
کرم ہو جائے میری بے خودی پر
زمانہ کر تو کوشش کچھ نہ ہوگا
نظر آقا کی ہے ہر امتی پر
محبت ایسی دل میں ہوکی جنت
رہے قربان میری عاشقی پر
گدائی اپنے درکی دےدو آقا
مجھے ہو فخر اپنی زندگی پر
لکھے ہوں یا محمد یا محمد
مرے شہر سخن کے ہر گلی پر
کرم رہبر پہ کردو میرے آقا
نہیں قابو ہے اپنی بےبسی پر
رہبر بستوی نظامی
***********************************
تقاضا یہ ایمانی ہے سبھی پر
تو قرباں جاں کریں ہم بھی نبی پر
جہاں نقش کف پا لگ گیاہے
نچھاور ہے فلک بھی اس گلی پر
تری زلفیں بکھر جاتی ہیں جب بھی
قسم کھاتا ہے رب عشوہ گری پر
بہاریں جاں چھڑکتی ہیں ادب سے
گلستان رسالت کی کلی پر
ہے چہرے کی زیارت بھی عبادت
صحابہ بھی نظر کرتے علی پر
کھڑا ہوں میں لئے کاسہ جو در پر
ترس کھاؤ مری تشنہ لبی پر
ہمیشہ ناز کرتا ہے یہ مظہر^
شفیع عاصیاں کی دلبری پر
✒از قلم: مظھرالسعیدی
***************************************
یہ وہ 31 کلام تھے جو مقابلہ میں شامل ہوۓ..
اس مرتبہ بھی بزم نعت گروپ کے مقابلہ میں ججوں کے پینل نے سارے کلاموں کو نمبرات سے نوازا…
اس کےنتائج آپ کے سامنے پیش ہیں….
پہلے آپ ہمارے فیصل پینل سے ملاقات کر لیں..
جج پینل میں 4 معزز لوگ شامل ہیں
…جج پینل….
1 استاذالشعراحضرت علامہ الحاج الشاہ مفتی صغیر اختر مصباحی صاحب قبلہ ، بریلی شریف.
2 استاذالشعرا حضرت علامہ سراج تابانی صاحب قبلہ ، کلکتہ
3 حضرت علامہ طفیل علوی صاحب قبلہ جھارکھنڈ.
4 رئیس القلم شاعر ذی وقار حضرت علامہ الشاہ مفتی احسن کمال رضوی صاحب قبلہ ، بنارس.
بزم نعت کے مقابلہ میں شرکت کے لئے آنے والے کلاموں کو چار الگ الگ زاویوں سے جانچا پرکھا جاتا ہے
1- *حسنِ فن*
2- *حسنِ مضمون*
3- *حسنِ زبان*
4- *حسنِ بیان*
مذکورہ عناوین کو مد نظر رکھتے ہوئے جج حضرات کا پینل فیصلہ سناتا ہے
1- *حسنِ فن* یعنی کلام کی فنی اور عروضی نزاکتوں، خوبیوں اور خامیوں کو دیکھتے ہوئے *حضرت علامہ مفتی صغیر اختر مصباحی صاحب قبلہ* کلام کو نمبرات عنایت فرماتے ہیں.
2- *حسنِ مضمون* یعنی کلام میں مستعمل مضامین کس معیار کے ہیں اس کو نظر میں رکھتے ہوئے *استاذالشعرا حضرت علامہ سراج تابانی صاحب قبلہ* کلام کو نمبرات عنایت فرماتے ہیں.
3- *حسنِ زبان* یعنی کلام میں استعمال کی گئی زبان کے معیار کو دیکھتے ہوئے *حضرت علامہ الشاہ طفیل علوی صاحب قبلہ* کلام کو نمبرات عنایت فرماتے ہیں.
4- *حسنِ بیان* یعنی معنی کی ادائیگی اور معیار کو دیکھتے ہوئے *حضرت علامہ الشاہ مفتی احسن کمال رضوی صاحب قبلہ* کلام کو نمبرات عنایت فرماتے ہیں.
الحمد لللہ ہمارے پینل نے پوری مستعدی اور ذمہ داری سے اپنے فرائض کو انجام دیا…..
04-03-2019
*عالمی واٹسپ گروپ بزم نعت کے فائنل نتائج*
سرپرستِ *”بزم نعت”* حضور سید حسان میاں صاحب قبلہ کے حکم پرمنعقد ہوۓ “بزم نعت” کے ستہترویں طرحی مشاعرہ میں جج پینل کے ذریعہ دئے گئے نمبرات کی تفصیل پیش ہے…
ہمارے پینل میں 4 جج حضرات ہیں جو مختلف عناوین کے تحت ہر کلام کو نمبرات عنایت فرماتے ہیں لیکن اس بار تین ہی جج حضرات نتائج ارسال کئے ہیں
ہر عنوان پر زیادہ سے زیادہ 25 نمبر تک مل سکتے ہیں ہیں یعنی اس بار ایک شاعر کو زیادہ سے زیادہ 75 نمبر تک حاصل ہو سکتے ہیں.
سبھی جج حضرات کے انفرادی نتیجے آپ دیکھ چکے ہیں…
اب مجموعی تفصیل ملاحظہ فرمائیں.
نام شاعر کل نمبر
1 جناب جاوید صدیقی 66
2 جناب ثاقب القادری 65
3 جناب شفیق رائے پوری 64
4 جناب ریاض برکاتی 61
5 جناب نسیم سحر گیاوی 61
6 جناب ہارون ایاز قادری 60
7 جناب مسعود درد 60
8 جناب علی احمد رضوی 59
9 جناب عارف القادری 59
10 جناب منیر شاہجہانپوری 58
11 ڈاکٹر کاشف بریلوی 58
12 جناب راحت انجم 57
13 جناب کفیل فتحپوری 57
14 جناب شیدا اسمعیلی 56
15 جناب حافظ اشرفی 56
16 جناب افتخار فیضی 56
17 سید شارق رضا خالدی 55
18 جناب نور جامعی 55
19 جناب ریاض شمسی 54
20 جناب فاروق مصباحی 54
21 جناب غفران قادری 53
22 جناب ریحان مرکزی 53
23 جناب ابرار احمد 53
24 جناب محفوظ جامعی 52
25 جناب عامر برکاتی 52
26 جناب حشمت نظامی 51
27 جناب نواب ازہر 49
28 جناب افلاک مصباحی 48
29 جناب رہبر نظامی 48
30 جناب ظفر انور حمیدی 47
31 جناب مظہر السعیدی 40
اس طرح اس مقابلہ میں حضرت جاوید صدیقی صاحب قبلہ نے 66 نمبر کے ساتھ پہلا ، حضرت علامہ ثاقب القادری بنارسی صاحب قبلہ نے 65 نمبر کے ساتھ دوسرا اور حضرت شفیق رائے پوری صاحب قبلہ نے 64 نمبر پا کر تیسرا مقام حاصل کیا.
میں تمام اراکین کی جانب سے ان تینوں عظیم شعرا کو دلی مبارکباد پیش کرتا ہوں…..
ان شاء اللّه بہت جلد سرپرستِ “بزم نعت”حضور سید حسان میاں صاحب قبلہ کی جانب سے خانقاہ مسولی شریف کے تحائف تینوں حضرات کو ارسال کر دئے جائیں گے….
خادم بزم نعت. اظھار شاہجہاں پوری
*************************************
آپ میں سے بھی اگر کوئی صاحب نعتیہ شاعری کا ذوق رکھتے ہوں اور بزم نعت کا حصہ بننے کی خواہش رکھتے ہوں تو
پر رابطہ فرمائیں. (صرف واٹسپ پر)
اس پوسٹ کو دوسروں تک پہنچا کر نعتیہ شاعری کو فروغ بخشیں اور عنداللہ ماجور ہوں…..
نوٹ.. گروپ میں نئے ممبران کوایام مشاعرہ میں شامل نہیں کیا جاتا ہے……
خادم گروپ:- اظھار شاہجہاں پور

 

 

Leave a Reply